New Fatima Blog

This blog is about khwab ki tabeer, Turkish dramas Dubbed in Urdu, Poetry, Naat and cooking videos.

Sunday, January 31, 2021

UNTAMED SEASON 1 COMPLETE DUBBED IN URDU Hindi Episode 2

UNTAMED SEASON 1 COMPLETE DUBBED IN URDU Episode 2

UNTAMED SEASON 1 COMPLETE  DUBBED IN URDU Hindi Episode 2



 

Thursday, January 21, 2021

khwab mein surah nisa parhna


khwab mein surah nisa parhna
dreaming of reading surah nisa
khwab mein surat al nisa parhna

خواب میں سورۃ نسا ﺀ پڑھنا
ڈریمنگ آف ریڈنگ سورۃ نساء 
خواب میں سورۃ النسا ء پڑھنا

khwab mein surah nisa parhna, dreaming of reading surah nisa ,khwab mein surat al nisa parhna,

 

khwab mein alam dekhna


khwab mein alam dekhna
dreaming of a religious teacher
khwab mein deene alam ko dekhna
khwab mein ulma  e deen ko dekhna

خواب میں عا لم دیکھنا
ڈریمنگ آف آ ریلیجیس ٹیچر
خواب میں دینی عالم کو دیکھنا
خواب میں علماء کو دیکھنا

khwab mein alam dekhna ,dreaming of a religious teacher ,khwab mein deene alam ko dekhna ,khwab mein ulma  e deen ko dekhna  خواب میں عا لم دیکھنا ڈریمنگ آف آ ریلیجیس ٹیچر ,خواب میں دینی عالم کو دیکھنا ,خواب میں علماء کو دیکھنا,

 

khwab mein surah qasas parhna

khwab mein surah qasas parhna
dreaming of reading surah qasas
khwab mein surat qasas parhna
خواب میں سورۃ قصص پڑھنا
ڈریمنگ آف ریڈنگ سورۃ قصص
خواب میں صورت قصص پڑھنا

khwab mein surah qasas parhna, dreaming of reading surah qasas ,khwab mein surat qasas parhna, خواب میں سورۃ قصص پڑھنا ڈریمنگ آف ریڈنگ, سورۃ قصص, خواب میں صورت قصص پڑھنا,

 

Friday, January 15, 2021

Naam kaisy kamaen by Shaykh Atif Ahmed

            

Monday, January 11, 2021

UNTAMED SEASON 1 COMPLETE DUBBED IN URDU Hindi Episode 1


In a magical world of inter-clan rivalry, two 
soulmates face treacherous schemes and 
uncover a dark mystery linked to a tragic 
event 
in the past.

cast :Sean Xiao, Wang Yibo, Zoey Meng

UNTAMED SEASON 1 COMPLETE  DUBBED IN URDU,



UNTAMED SEASON 1 COMPLETE DUBBED IN URDU Episode 1

Ye hai maykada yahan rind hain

 

Ye hai maykada yahan rind hain  Yahan sab ka saqi imam hai

Badakharon ke darmiyan saqi


Kuch masail ulajh gaye honge


Jab teri zulf khul gayi hogi


Sab yaqeenan sulajh gaye honge


Yeh he mehkada yahan rind hain


Yahan sab ka saqi imam he

Gham-i zamana bohat ihteram karta he


Mehkadah he yahan sukoon se baith


Koi aafat idhar nahi aati


Yeh saqi ki karamat he


Ke faiz-i mehparasti he


Ghata ke bhais mein mehkhane pe


Rehmat barasti he


Jise pee ke bazm-i rindan sar-i arsh jhoomti he


Woh sharaab aaj saqi tere ghar baras rahi he


Aray kayi bar doobe, kayi bar ubhre


Kayi bar tufan main chakkar lagaye


Tumhare takhayul nay aisa duboya


Bohat koshishen magar ubharne na paye


Kayi bar tufan se takrai kashti


Kayi bar takra ke sahil pe aye


Talash-e-talab mein woh lazzat mili he


Dua kar raha hoon ke manzil na aye


Yeh kis ki nigahon ne saghar pilaye

Khudi par meri bekhudi ban ke chaye


Khabardar aye dil, maqam-e-adab he


Kahin bada noshi pe dhabba na aye

Kuch is ada se karishme dekhaye jate hain


Ada shanas bhi dhoke mein aye jate hain


Hamara haal toh dekha, hamara zarf bhi dekh


Nigah uthti nahi, gham uthaye jate hain


Yeh mehkada he tera madrasa nahi waiz


Yahan sharaab se insan banaye jate hain

Pehle toh shaikh ne zara dekha idhar udhar

Phir sar jhuka ke dakhil-i mehkhana hogaya

Kuch soch ke shama pe parwana jala hoga


Shayad isi jalne mein jeene ka maza hoga


Jis waqt yeh meh tu ne botal mein bhari hogi


Saqi tera masti se kiya haal hua hoga


Mehkhane se masjid tak paye gaye naqsh-i pa


Ya shaikh gaya hoga ya rind gaya hoga

Are jhoom jhoom ke la, muskara ke la


Phoolon ke rasm-e chaand ki kirnein mila ke la


Kehte hain umr-e rafta kabhi laut ti nahi

Ja mehkade se meri jawani utha ke la

Saqi ki har nigah pe bal kha ke peegaya


Maujon se khailta hua lehra ke peegaya


Aur peeta baghair izn yeh kab thi meri majal


Dar pardah chashm-i yaar ki sheh pa ke peegaya


Aye rehmat-i tamam, meri har khata ma’af


Mein inteha-i shauq mein ghabra ke peegaya

Tauba ko tor tar ke ghabra ke peegaya

Yeh sab samjhane wale mujhe samjha ke rehgaye


Laikin mein aik aik ko samjha ke peegaya


Sheesha bhi bohat wasf o hunar rakhta he

Asraar-i nehufta ki khabar rakhta he


Rindon mein bhi milte hain allah wale


Nasha bhi bari tez nazar rakhta he

He mehkade ka khaas maqamat mein shumar


Jo rind bhi mila woh humein parsa mila

Khula na hota agar mehkade ka darwaza


Toh roshni ke liye hum kidhar gaye hotay


 


Yeh ghalat he sharaab ki tarif


Is ka zehnon pe raj hota hai


Sirf hiddat sharab deti hai


Are baqi apna mizaj hota hai


Har ranj ko khafif tabassum se taal de

Nazil ho koi barq toh saghar uchal de


Tu jam mein sharaab ko mat daal saqiya


Is ko bara-i rast mere dil mein daal de


Are bol meethe, nazar nashili he


Mein ne to mehkadon se pee li he


Mein ne thori se paish ki thi magar


Sheikh ne behisab pee li hai

Yahan sab ka saqi imam he


Jari hein roshni mein do sarmadi lakirein

Aik jaam ja raha he, aik jaam aa raha he

Bari haseen he zulfon ki shaam pee lijiye

Hamare haath se do char jam pee lijiye

Aur pilaye jab koi mashooq apne hathon se

Sharab phir nahi rehti haram pee lijiye

Aks-i jamal-i yaar bhi kiya tha ke deyr tak


Aine umrion ki tarah bolte rahe


Kal mehkade mein rind tawazun na rakh sake


Khat-i subooh pe kon-o-makan dolte rahe


Hum muttaqi-i shehr-i kharabat raat bhar


Tasbih-i zulf-i seen tana rolte rahe

Agarcheh banda nawazi ki tujh mein boo hoja


Kasam khuda ki khudai mein tu hi tu hoja


Agar baghair tere mehkashi karoon saqi


Sharaab jaam mein ate hi bas lahu hoja


Aur wuzoo sharab se kar ke sharaab khane mein


Namaaz jab parhon saqi imam tu hoja


 


Yeh he mehkadah yahan rind hain


Yeh haram nahi aye shaikh ji


Yahan parsai haram he


 Peena haram he na pilana haram he


Peene ke baad hosh mein ana haram he


Likha hua he pir-i mughan ki dukan par


Kamzarf ko pilana haram he


Jo zara si pee ke behak gaya


Use mehkade se nikal do


Are yahan kamnazar ka guzar nahi


Yahan ahl-e zarf ka kaam he


 


Sharab ka koi apna sarhi rang nahin


Sharab tajziya o ihtesaab karti he


Jo ahl-e dil hain barhati he abru on ki


Jo beshaoor hain unko kharab karti he

Yeh janab-i shaikh ka falsafa


Jo samajh mein meri na aa saka


Jo wahan piyo to halal he


Jo yahan piyo to haram he


 


Are patti patti gulab hojati


Har kali mehv-i khawab ho jati


Tum ne dali na mehfashan nazrein


Warna shabnam sharab hojati

Yeh janab-i shaikh ka falsafa


Jo samajh mein meri na aa saka


Jo wahan piyo to halal he


Jo yahan piyo to haram he


Read in Urdu click the link below:

https://www.newfatimablog.com/2021/01/ye-hai-maykada-yahan-rind-hain-in-urdu.html





ye hai maykada yahan rind hain in urdu

ye hai maykada yahan rind hain 

                    yahan sab ka saqi imam hai 


بادا خاروں  كے درمیان ساقی


کچھ مسائل الجھ گئے ہونگے



جب تیری زلف کھل گئی ہوگی


سب یقینا سلجھ گئے ہونگے

ye hai maykada yahan rind hain in urdu


یہ ہے مے کدہ  یہاں رند ہیں


یہاں سب کا ساقی امام ہے


غم  زمانہ بہت ا حتیرام کرتا ہے


مے کدہ  ہے یہاں سکون سے بیٹھ


کوئی آفت ادھر نہیں آتی


یہ ساقی کی كرامت ہے


كے فیض  مے پرستی ہے


گھٹا كے بھیس میں مے حا نے پہ


رحمت برستی ہے


جسے پی كے بزم رندان سر ے  عرش جھومتی ہے


وہ شراب آج ساقی تیرے گھر برس رہی ہے


ارے کئی بار ڈوبے ، کئی بار ابھرے


کئی بار طوفان میں چکر لگائے


تمھارے تخیل نے ایسا ڈبویا


بہت کوشیشں  کی مگر ابھرنے نہ پائے


کئی بار طوفان سے ٹکرائی  کشتی


کئی بار ٹکرا كے ساحل پہ آئے


تلاش طلب میں وہ لذت ملی ہے


دعا کر رہا ہوں كے منزل نہ  آئے


یہ کس کی نگاہوں نے ساغر پلائے


خودی پر میری بےخودی بن كے چھائے


خبردار ا ے دِل ، مقام ادب ہے


کہیں با دا نوشی پہ دھبہ نا آئے


کچھ اِس ادا سے کریشمے  دکھائے جاتے ہیں


ادا شناس بھی دھوکے میں آئے جاتے ہیں


ہمارا حال تو دیکھا ، ہمارا ظرف بھی دیکھ


نگاہ اٹھتی نہیں ، غم اٹھائے جاتے ہیں


یہ مے کدہ ہے تیرا مدرسہ نہیں واعظ


یہاں شراب سے انسان بنائے جاتے ہیں


پہلے تو شیخ نے ذرا دیکھا ادھر اُدھر


پِھر سَر جھکا كے داخل مے  خانہ ہو گیا


کچھ سوچ كے شمع پہ پروانہ جلا ہو گا


شاید اسی جلنے میں جینے کا مزہ ہو گا

جس وقت یہ مے  تو نے بوتل میں بھری ہوگی

ساقی تیرا مستی سے کیا حال ہوا ہو گا

مے حانے سے مسجد تک پائے گئے نقش پا

یا شیخ گیا ہو گا یا رند گیا ہو گا

آرے  جھوم جھوم كے لا ، مسکرا كے لا

پھولوں كے رسمِ چاند کی کرنیں ملا كے لا

کہتے ہیں عمر  رفتہ کبھی لوٹتی نہیں

جا مے کدے  سے میری جوانی اٹھا كے لا

ساقی کی ہر نگاہ پہ بل کھا كے پی گیا

موجوں سے کھیلتا ہوا لہرا كے پی گیا

اور پے  بغیر اِذْن یہ کب تھی میری مجال

دَر پردہ چشم یار کی شہہ پا كے پی گیا

ا ے رحمت تمام ، میری ہر حطا  معاف

میں انتیحائے  شوق میں گھبرا كے پی گیا

توبہ کو توڑ   كر  گھبرا كے پی گیا

یہ سب سمجھانے والے مجھے سمجھا تے رہ گے

لیکن میں ایک ایک کو سمجھا كے پی گیا

شیشہ بھی بہت وصف و ہنر رکھتا ہے

اسرار-ننے حوفتا کی خبر رکھتا ہے

رندوں میں بھی ملتے ہیں اللہ والے

نشہ بھی بڑی تیز نظر رکھتا ہے

ہے مے کدے  کا خاص مقامات میں شمار

جو رند بھی ملا وہ ہمیں پارسا ملا

کھلا نہ ہوتا اگر مے کدے  کا دروازہ

تو روشنی كے لیے ہم کدھر گئے ہوتے

یہ غلط ہے شراب کی تعریف

اِس کا ذہنوں پہ راج ہوتا ہے

صرف حدت شراب دیتی ہے

ا ر ے باقی اپنا مزاج ہوتا ہے

ہر رنج کو خفیف تبسم سے ٹال دے

نازل ہو کوئی برق تو ساغر اچھل دے

تو جام میں شراب کو مت ڈال ساقیا

اِس کو براہ   راست میرے دِل میں ڈال دے


ا رے  بول میٹھے ، نظر نشیلی ہے

میں نے تو مے کدوں  سے پی لی ہے


میں نے تھوڑی سے پیش کی تھی مگر

شیخ نے بے حساب پی لی ہے

یہاں سب کا ساقی امام ہے

جاری ہیں روشنی میں دو سرمدی لکیریں 


ایک جام جا رہا ہے ، ایک جام آ رہا ہے


بڑی حَسِین ہے زلفوں کی شام پی لیجیے

ہمارے ہاتھ سے دو چا ر جام پی لیجیے

اور پلائے جب کوئی معشوق اپنے ہاتھوں سے

شراب پِھر نہیں رہتی حرام پی لیجیے

عکس جمال یار بھی کیا تھا كے دیر تک

آئینے عمریوں  کی طرح بولتے رہے

کل مے کدے  میں رند توازن نہ  رکھ سکے

گھاٹ سبوخ  پہ کون و  مکان ڈولتے رہے

ہم متقی شہر-خرابات رات بھر

تسبیح زلف سین تانا رولتے  رہے

اگرچہ بندہ نوازی کی تجھ میں بو ہو جا

قسم خدا کی خدائی میں تو ہی تو ہوجا

اگر بغیر تیرے مے کشی کروں ساقی

شراب جام میں آتے ہی بس لہو ہوجا

اور وضو شراب سے کر كے شراب حانے میں

نماز جب پڑھوں ساقی امام تو ہوجا

یہ ہے مے کدہ  یہاں رند ہیں

یہ حرام نہیں ا ے شیخ جی

یہاں پا ر سائی حرام ہے

پینا حرام ہے نا پلانا حرام ہے

پینے كے بعد ہوش میں آ نا حرام ہے

لکھا ہوا ہے پیر موغان  کی دکان پر

کم ظرف کو پلانا حرام ہے

جو ذرا سی پی كے بہک گیا

اسے  مہ کدے  سے نکا ل دو

ارے یہاں کم  نظر کا گزر نہیں

یہاں اہل ظرف کا کام ہے

شراب کا کوئی اپنا سر ہی رنگ نہیں

شراب تجزیہ و ا حتساب کرتی ہے

جو اہل دِل ہیں بڑھاتی ہے ابرو ا ن کی

جو بیشہ ور ہیں ان کو خراب کرتی ہے

یہ جناب  شیخ کا فلسفہ

جو سمجھ میں میری نا آ سکا

جو وہاں پیو تو حلال ہے

جو یہاں پیو تو حرام ہے

ا رے  پتی پتی گلاب ہوجاتی

ہر کلی محو  خواب ہو جاتی

تم نے ڈالی نہ  مہ فشان نظریں

ورنہ شبنم شراب ہوجاتی

یہ جناب شیخ کا فلسفہ

جو سمجھ میں میری نا آ سکا

جو وہاں پیو تو حلال ہے

جو یہاں پیو تو حرام ہے












Tuesday, January 5, 2021

Surah Baqarah Fast Recitation by Sheikh Sudais

 


                                  Surah Baqarah Fast Recitation by Sheikh Sudais