شعور میں کبھی احساس میں بساؤں اسے

مگر میں چار طرف بے حجاب پاؤں اسے

اگرچہ فرط حیا سے نظر نہ آؤں اسے
وہ روٹھ جائے تو سو طرح سے مناؤں اسے

طویل ہجر کا یہ جبر ہے کہ سوچتا ہوں
جو دل میں بستا ہے اب ہاتھ بھی لگاؤں اسے

اسے بلا کے ملا عمر بھر کا سناٹا
مگر یہ شوق کہ اک بار پھر بلاؤں اسے

اندھیری رات میں جب راستہ نہیں ملتا
میں سوچتا ہوں کہاں جا کے ڈھونڈ لاؤں اسے

ابھی تک اس کا تصور تو میرے بس میں ہے
وہ دوست ہے تو خدا کس لیے بناؤں اسے

ندیمؔ ترک محبت کو ایک عمر ہوئی
میں اب بھی سوچ رہا ہوں کہ بھول جاؤں اسے

Ahmed nadeem qasmi

shaoor mein kabhi ehsas mein basaon usay,Ahmed nadeem qasmi, شعور میں کبھی احساس میں بساؤں اسے,poetry,Sad Poetry,


shaoor mein kabhi ehsas mein basaon usay

magar mein chaar taraf be hijaab paon usay

agarchay fart haya se nazar nah aon usay
woh roth jaye to so terhan se manao usay

taweel hijar ka yeh jabar hai ke sochta hon
jo dil mein basta hai ab haath bhi lagaun usay

usay bulaa ke mila Umar bhar ka sannata
magar yeh shoq ke ik baar phir bulaun usay

andheri raat mein jab rasta nahi milta
mein sochta hon kahan ja ke dhoond lau usay

abhi tak is ka tasawwur to mere bas mein hai
woh dost hai to kkhuda kis liye bunun usay

ندیمؔ tark mohabbat ko aik Umar hui
mein ab bhi soch raha hon ke bhool jaoon usay
ahmed nadeem qasmi