New Fatima Blog

This website is about khwab ki tabeer by ibn e siren, Ibn e kathir, khwab nama e yousafi in urdu , Quran, Hadith, Dramas in Urdu and english, Poetry, Naat, and cooking.

a ads

Sunday, October 18, 2020

Teri hi shkl k but hain kai tarashey hue


AMIR AMMER


تِری ہی شکل کے بُت ہیں کئی تراشے ہوئے
نہ پُوچھ کعبہِ دِل میں بھی کیا تماشے ہوئے
ہماری لاش کو میدانِ عشق میں پہچان 
بوقتِ وصل کوئی بات بھی نہ کی ہم نے 
بجھی ہوئی سی ہیں آنکھیں تو دلخراشے ہوئے
وہ کیسے بات کو تولیں گے، اور بولیں گے؟
زباں تھی سُوکھی ہوئی، ہونٹ اِرتعاشے ہوئے
کہ عام لوگ ہیں ہم آپ تو مہاشے ہوئے
جو پٙل میں تولا ہوئے اور پٙل میں ماشے ہوئے
تمام پیار کا الزام ڈالئے ہم پر
میں تیرے شہر سے نکلا تھا عین اُس لمحہ
ترے نِکاح پہ تقسیم جب بتاشے ہوئے
عامر امیر
Teri hi shkl k but hain kai tarashey hue
Bujhi hui si hain ankhain to dil kharashey hue
Na pooch akaba-e-dil me bhi kya tamashey hueHamari lash ko medan-e-ishq me pehchan 
K aam log hain hm ap to mahashey hueBawqt-e-wsl koi bat bhi na ki hm ne Zuban thi sookhi hui hont irta'ashey hue 
Jo pal me tola hue or pal me mashey hueWo kese bat ko tolain ge or bolain ge Tmam piar ka ilzam daliye hm pr 
Me terey shehr se nikla tha ain us lamha
Terey nikah pr taqseem jab batashey hue
Amir Ameer

No comments:

Post a Comment