kuch talluq bhi nahi, phir bhi khafa hoon tujh se

jane kis maan pay mein rooth gaya hoon tujh se
mujhe kam umer samajh ke mِri tazheek nah kar
mein mohabbat mein kayi saal bara hoon tujh se
jis terhan doodh mein ghul jati hai cheeni, janan !
mein khayalon mein usi terhan mila hoon tujh se
gaind ban kar tre peeron mein para hon ke too khail
too samjhta hai ke mein khail raha hoon tujh se
mere ajza mein nah matti hai nah pani hai nah aag
mere paiker ko parkh le, mein bana hoon tujh se
ae chatanoo ki terhan mujh ko dabanay walay !
dekh chashmay ki terhan phoot baha hoon tujh se
meri rigg rigg tri rigg rigg se jari hai, mِre yaar !
zahiri tor pay to door khara hoon tujh se
ae udasi! mein adab is liye karta hoon tra
gham ke jitne bhi sabaq hain, mein parha hoon tujh se

Rehman faris       

kuch talluq bhi nahi, phir bhi khafa hoon tujh se,rehman faris,


کچھ تعلق بھی نہیں، پھر بھی خفا ہُوں تُجھ سے

جانے کس مان پہ مَیں رُوٹھ گیا ہُوں تُجھ سے
مُجھے کم عُمرسمجھ کے مِری تضحیک نہ کر
مَیں محبت میں کئی سال بڑا ہُوں تُجھ سے
جس طرح دودھ میں گُھل جاتی ہے چینی، جاناں !
مَیں خیالوں میں اُسی طرح مِلا ہُوں تُجھ سے
گیند بن کر ترے پیروں میں پڑا ہوں کہ تُو کھیل
تُو سمجھتا ہے کہ مَیں کھیل رہا ہُوں تُجھ سے
میرے اجزا میں نہ مٹی ہے نہ پانی ہے نہ آگ
میرے پیکر کو پرکھ لے، مَیں بنا ہُوں تُجھ سے
اے چٹانوں کی طرح مُجھ کو دبانے والے !
دیکھ چشمے کی طرح پھوٹ بہا ہُوں تُجھ سے
میری رگ رگ تری رگ رگ سے جُڑی ہے، مِرے یار !
ظاہری طور پہ تو دُور کھڑا ہُوں تُجھ سے
اے اُداسی ! مَیں ادب اس لیے کرتا ہُوں ترا
غم کے جتنے بھی سبق ہیں، مَیں پڑھا ہُوں تُجھ سے
رحمان فارس