Zahir kashmiri,poetry,looh mazaar dekh ke jee dang reh gaya lyrics in urdu,


looh mazaar dekh ke jee dang reh gaya

har aik sir ke sath faqat sang reh gaya

badnaam ho ke ishhq mein hum surkh ro hue
acha sun-hwa ke naam gaya nng reh gaya

hoti nah hum ko saya deewar ki talaash
lekin muheet zeist bohat tang reh gaya

seerat nah ho to aariz o rukhsaar sab ghalat
khushbu udi to phool faqat rang reh gaya

–apne gilaay mein apni hi baho ko dalie
jeeney ka ab to aik yahi dhang reh gaya

kitney hi inqilab shikan dar shikan miley
aaj apni shakal dekh ke mein dang reh gaya

takhayyul ki hado ka taayun nah ho saka
lekin muheet zeist bohat tang reh gaya

kal kainat fikar se azad ho gayi
insaa misal dast teh sang reh gaya

hum un ki bazm naz mein yun chup hue zaheer
jis terhan ghatt ke saaz mein aahang reh gaya

Zahir kashmiri

 لوح مزار دیکھ کے جی دنگ رہ گیا

ہر ایک سر کے ساتھ فقط سنگ رہ گیا

بدنام ہو کے عشق میں ہم سرخ رو ہوئے
اچھا ہوا کہ نام گیا ننگ رہ گیا

ہوتی نہ ہم کو سایۂ دیوار کی تلاش
لیکن محیط زیست بہت تنگ رہ گیا
سیرت نہ ہو تو عارض و رخسار سب غلط
خوشبو اڑی تو پھول فقط رنگ رہ گیا

اپنے گلے میں اپنی ہی بانہوں کو ڈالیے
جینے کا اب تو ایک یہی ڈھنگ رہ گیا

کتنے ہی انقلاب شکن در شکن ملے
آج اپنی شکل دیکھ کے میں دنگ رہ گیا

تخیل کی حدوں کا تعین نہ ہو سکا
لیکن محیط زیست بہت تنگ رہ گیا

کل کائنات‌ فکر سے آزاد ہو گئی
انساں مثال‌ دست تہ سنگ رہ گیا

ہم ان کی بزم ناز میں یوں چپ ہوئے ظہیرؔ
جس طرح گھٹ کے ساز میں آہنگ رہ گیا

ظہیر کاشمیری