woh dil Nawaz hai lekin nazar shanaas nahi
mra ilaaj marey charah gir ke paas nahi


tarap rahay hain zuba par kayi sawal magar
marey liye koi Shayan iltamas nahi


tre jalo mein bhi dil kanp kanp uthta hai
marey mizaaj ko aasoudgi bhi raas nahi


kabhi kabhi jo tre qurb mein guzaray thay
ab un dinon ka tasawwur bhi mere paas nahi


guzar rahay hain ajab marhalon se deedaa o dil
sehar ki aas to hai zindagi ki aas nahi


mujhe yeh dar hai tri arzoo nah mit jaye
bohat dinon se tabiyat meri udaas nahi


nasir  kazmi

وہ دل نواز ہے لیکن نظر شناس نہیں, مرا علاج مرے چارہ گر کے پاس نہیں,Nasir Kazmi,woh dil Nawaz hai lekin nazar shanaas nahi,


وہ دل نواز ہے لیکن نظر شناس نہیں
مرا علاج مرے چارہ گر کے پاس نہیں


تڑپ رہے ہیں زباں پر کئی سوال مگر
مرے لیے کوئی شایان التماس نہیں


ترے جلو میں بھی دل کانپ کانپ اٹھتا ہے
مرے مزاج کو آسودگی بھی راس نہیں


کبھی کبھی جو ترے قرب میں گزارے تھے
اب ان دنوں کا تصور بھی میرے پاس نہیں


گزر رہے ہیں عجب مرحلوں سے دیدہ و دل
سحر کی آس تو ہے زندگی کی آس نہیں


مجھے یہ ڈر ہے تری آرزو نہ مٹ جائے
بہت دنوں سے طبیعت مری اداس نہیں


ناصرؔ کاظمی