یہ وہ دھندہ ہے کہ جو بند نہیں ہو سکتا

پیاس کے شہر میں بِکتی ہیں سرابی باتیں
ہیں گناہوں کی تجارت میں بھی سب سے آگے
یہ جو کرتے ہیں بہت بڑھ کے ثوابی باتیں
ایک درویشِ خُدا مست کو میں جانتا ہوں
لحنِ بُوذر میں سناتا ہے تُرابی باتیں
Yeh Wo Dhanda Hay K Jo Band Nahi Ho Sakta,Poetry,Ali Zaryoun,








Yeh Wo Dhanda Hay K Jo Band Nahi Ho Sakta
Pyaas kay Shehr Mien Bikti Hain Sarabi Batain!
Hain Gunahon Ki Tijarat Mien Bhi Sub Se Aage
Yeh Jo Karte Hain Buhat Barh K Sawabi Batain
Aik Darwaish e Khuda Mast Ko Main Janta Hon
Lahn e Bu Zar Mien Sunata Hay Turabi Batain !