" زرِعشق "
تم کسی دن جو چمکتا ہوا دیکھو مجھ کو
جان لینا ! یہ زرِ عشق کی تابانی ہے
میرے شبدوں میں اگر اپنا سراپا دیکھو
سوچ لینا ! یہ نمِ ہجر کی حیرانی ہے
کسی دربار کی آمین بھری خلوت میں
عین ممکن ہے تمھیں میرا پتا مل جائے
یہ بھی ہو سکتا ہے میں تم کو ملوں یا نہ ملوں
لیکن اس کھوج میں خود تم کو خدا مل جائے !
اپنے ٹیرس سے نظر کرنا کبھی مشرقی سمت
نفس گم کردہ نظاروں میں ملوں گا تم کو
اور شبِ قدر تلاشو تو مجھے بھی تکنا
طاق راتوں کے ستاروں میں ملوں گا تم کو
سخت بزدل ہیں کہ جو عشق میں تھک جاتے ہیں
میں تو ہاں ! تم سے بچھڑ کر بھی تمھارا رہوں گا
سانس بن جاوں گا ہر گھٹتے ہوئے سینے کی
ہر دُکھے دل کے لئے ایک سہارا رہوں گا
کیا کلیمی سے بھلا عشق کلامی کم ہے ؟
بادشاہی نہ سہی ! دل کی غلامی کم ہے ؟
کیا یہ کم ہے؟ کہ تمھیں دیکھوں، دِکھے کُل دنیا
کیا یہ کم ہے ؟ کہ لکھوں عشق ! پڑھے کل دنیا 
یارِ من عشق طلب عشق میں سب عشق سند
جذبِ من عشق ازل عشق ابد عشق احد 
عشق دربار بھی سُن کار بھی سرکار بھی عشق
عشق تلوار بھی آزار بھی دلدار بھی عشق
عشق ہو جائے تو کچھ اور کہاں ہوتا ہے 
کچھ نہیں ہوتا وہاں ! عشق جہاں ہوتا ہے 




" ZAR E ISHQ "
tum kisi din jo chamakta sun-hwa dekho mujh ko
jaan lena! yeh zrِ ishhq ki Tabani hai
mere shabdon mein agar apna saraapaa dekho
soch lena! yeh NUM hijar ki herani hai
kisi darbaar ki ameeen bhari khalwat mein
ain mumkin hai tumhen mera pata mil jaye
yeh bhi ho sakta hai mein tum ko milon ya nah milon
lekin is khoj mein khud tum ko kkhuda mil jaye !
–apne terus se nazar karna kabhi mashriqi simt
nafs gum kardah nazaron mein milon ga tum ko
aur shab_e_ qader TALASHO to mujhe bhi takna
taaq raton ke sitaron mein milon ga tum ko
sakht buzdil hain ke jo ishhq mein thak jatay hain
mein to haan! tum se bhichar kar bhi tumahra rahon ga
saans ban jaun ga har ghatte hue seenay ki
har dikhe dil ke liye aik sahara rahon ga
kya کلیمی se bhala ishhq kalami kam hai ?
badshahi nah sahi! dil ki ghulami kam hai ?
kya yeh kam hai? ke tumhen daikhon, dikhe kُl duniya
kya yeh kam hai? ke likhon ishhq! parhay kal duniya !
Yaar mann ishhq talabb ishhq mein sab ishhq sanad
jazb mann ishhq azal ishhq abadd ishhq ahad !
ishhq darbaar bhi sun car bhi sarkar bhi ishhq
ishhq talwar bhi azaar bhi dildar bhi ishhq
ishhq ho jaye to kuch aur kahan hota hai !
kuch nahi hota wahan! ishhq jahan hota hai !