محسن نقوی کی وہ غزل جس
کو سن کر کوئی خود کشیاں ہوئیں
تیری یاد سے وحشت نہیں ہوتی مجھ کو
اب تری یاد سے وحشت نہیں ہوتی مجھ کو
زخم کھلتے ہیں اذیت نہیں ہوتی مجھ کو
اب کوئی آئے چلا جائے میں خوش رہتا ہوں
اب کسی شخص کی عادت نہیں ہوتی مجھ کو
ایسا بدلا بوں ترے شہر کا پانی پی کر
جھوٹ بولوں تو ندامت نہیں ہوتی مجھ کو
ہے امانت میں خیانت ہو کسی کی خاطر
کوئی مرتا ہے تو حیرت نہیں ہوتی مجھ کو
تو جو بدلے تری تصویر بدل جاتی ہے
رنگ بھرنے میں سہولت نہیں ہوتی مجھ کو
اکثر اوقات میں تعبیر بتا دیتا ہوں
بعض اوقات اجازت نہیں ہوتی مجھ کو
اتنا مصروف ہیں جینے کی ہوس میں شاہد
سانس لینے کی بھی فرصت نہیں ہوتی مجھ کو 

Ab tri yaad se wehshat nahi hoti mujh ko,MOHSIN NAQVI,


mohsin naqvi ki woh ghazal jis
ko sun kar koi khud kshyan huien
teri yaad se wehshat nahi hoti mujh ko
ab tri yaad se wehshat nahi hoti mujh ko
zakham khultay hain aziat nahi hoti mujh ko
ab koi aaye chala jaye mein khush rehta hon
ab kisi shakhs ki aadat nahi hoti mujh ko
aisa badla bon tre shehar ka pani pi kar
jhoot bolon to nedamat nahi hoti mujh ko
hai amanat mein khayanat ho kisi ki khatir
koi mrta hai to herat nahi hoti mujh ko
to jo badlay tri tasweer badal jati hai
rang bharnay mein sahoolat nahi hoti mujh ko
aksar auqaat mein tabeer bta deta hon
baaz auqaat ijazat nahi hoti mujh ko
itna masroof hain jeeney ki hawas mein Shahid
saans lainay ki bhi fursat nahi hoti mujh ko