hum milein ge kahin
ajnabi shehar ki khawab hoti hui
shahrahon pay aur shahraon pay phaily hui
dhoop mein
aik din hum kahin sath hon ge
waqt ki aandhiyon se atti‬ sa-aton par se matti hatatay hue aik hi jaisay ansoo bahatye hue
hum milein ge ghany junglon ki hari ghaas par
aur kisi shaakh naazuk pay parte hue boojh ki dastanoon mein kho jayen gay
hum Sanober ke pairron ke nokeelay pattoun se sadiiyon se soye hue deyotaon ki ankhen chabho jayen ge
hum milein ge kahin barf ke baazuon mein ghiry parbatoon par
banj qabron mein letey hue koh pimaon ki yaad mein nazam kehte hue
jo pahoron ki aulaad thay aur inhen waqt anay pay maa baap ne apni agosh mein le liya
hum milein ge Shah Sulaiman ke Uras mein
hoz ki seerihoon par wudu karne walon ke shafaaf cheharon ke agay
sang mar-mar se aarasta farsh par paiir rakhtay hue aah bhartay hue
our darakhton ko minnat ke dhagon se azad karte hue
hum milein ge
hum milein ge kahin naar manndi ke saahil pay atay hue
apnay gum gashta rustoon ki khaak safar se atti‬ vrdyon ke nishaa dekh kar marakish se palty hue aik jarnail ki aakhri baat par muskuratay hue
ik jahan jung ki chout khatay hue
hum milein ge kahin roos kidashtaon ki jhooti kahani pay aankhon mein herat sajaye hue
sham, Lebanon , bairout ki nargisi chashmon roun ki aamad ke nohom pay hanstay hue
khooni kazion se maflooj albanih ke pahari ilaqon mein maheman ban kar milein ge
hum milein ge kahin aik murda zamane ki khush rang tahazeeb mein jazb honay ke imkaan mein
aik purani imarat ke pehlu mein ujre hue lawn mein
aur –apne asiiron ki raah dekhte
paanch sadiiyon se weraan zindaan mein
hum milein ge tamannaon ki chatri ke taley
khawahishon ki hawaon ke be baak boson se chhalni badan sonpnay ke liye raastoon ko
hum milein ge zameen se namodaar hotay hue aathween bar-e-azam mein urrtay hue qaleen par
hum milein ge kisi baar mein
apni baqaya bachi Umar ki paimali ke jaam haath mein len ge
aur aik hi ghoont mein hum yeh seyal andar utarain ge aur hosh anay talak geet ghaein ge
bachpan ke qissay sunataa sun-hwa geet jo aaj bhi hum ko azber hai way beyri to khildi tan pye ein pattay paar kya hai pattay paar kya hai
barery way beyri ton khildi tan pye ein pattay paar kya hai pattay paar kya hai
hum milein ge kahin
baagh mein gaon mein dhoop mein chaon mein
rait mein dasht mein shehar mein
masjidoon mein kalisaon mein
mandir mein maharab mein charch mein
mosladhar barish mein bazaar mein
khawab mein aag mein
gehray pani mein galiyo mein jungle mein aur asmano mein
kon o makan se paray
ghair abad sayarah arzoo mein
sadiiyon se khaali pari bench par
jahan mout bhi hum se dast o garibaan hogi
to bas aik do din ki maheman ho gi
tahazeeb Hafi

hum milein ge kahin ajnabi shehar ki khawab hoti hui shahrahon pay aur shahraon pay phaily hui dhoop mein


ہم ملیں گے کہیں اجنبی شہر کی خواب ہوتی ہوئی
شاہراؤِں پہ اور شاہراوں پہ پھیلی ہوئی دھوپ میں
ایک دن ہم کہیں ساتھ ہوں گے
وقت کی آندھیوں سے اٹی ساعتوں پر سے مٹی ہٹاتے ہوئے ایک ہی جیسے آنسو بہاتے ہوئے
ہم ملیں گے گھنے جنگلوں کی ہری گھاس پر
اور کسی شاخ نازک پہ پڑتے ہوئے بوجھ کی داستانوں میں کھو جائیں گے
ہم صنوبر کے پیڑوں کے نوکیلے پتوں سے صدیوں سے سوئے ہوئے دیوتاوں کی آنکھیں چبھو جائیں گے
ہم ملیں گے کہیں برف کے بازوؤں میں گھرے پربتوں پر
‏بانجھ قبروں میں لیٹے ہوئے کوہ پیماؤں کی یاد میں نظم کہتے ہوئے
جو پہاڑوں کی اولاد تھےاور انہیں وقت آنے پہ ماں باپ نے اپنی آغوش میں لے لیا
ہم ملیں گے شاہ سلیمان کے عرس میں
حوض کی سیڑھیوں پر وضو کرنے والوں کے شفاف چہروں کے آگے
سنگ مرمر سے آراستہ فرش پر پیر رکھتے ہوئےآہ بھرتے ہوئے
‏اور درختوں کو منت کے دھاگوں سے آزاد کرتے ہوئے
‏ہم ملیں گے
‏ہم ملیں گے کہیں نار منڈی کے ساحل پہ آتے ہوئے
‏اپنے گم گشتہ رستوں کی خاک سفر سے اٹی وردیوں کے نشاں دیکھ کر مراکش سے پلٹے ہوئے ایک جرنیل کی آخری بات پر مسکراتے ہوئے
اک جہاں جنگ کی چوٹ کھاتے ہوئے
ہم ملیں گے کہیں روس کی داشتاؤں کی جھوٹی کہانی پہ آنکھوں میں حیرت سجائے ہوئے
‏شام، لبنان، بیروت کی نرگسی چشمو رؤں کی آمد کے نوحوں پہ ہنستے ہوئے
‏خونی کزیوں سے مفلوج البانیہ کے پہاڑی علاقوں میں مہمان بن کر ملیں گے
ہم ملیں گے کہیں ایک مردہ زمانے کی خوش رنگ تہذیب میں جذب ہونے کے امکان میں
ایک پرانی عمارت کے پہلو میں اجڑے ہوئے لان میں
اور اپنے اسیروں کی راہ دیکھتے
پانچ صدیوں سے ویران زندان میں
ہم ملیں گے تمناؤں کی چھتریوں کے تلے
خواہشوں کی ہواؤں کے بے باک بوسوں سے چھلنی بدن سونپنے کے لئے راستوں کو
ہم ملیں گے زمین سے نمودار ہوتے ہوئے آٹھویں براعظم میں اڑتے ہوئے قالین پر
ہم ملیں گے کسی بار میں
اپنی بقایا بچی عمر کی پائمالی کے جام ہاتھ میں لیں گے
اور ایک ہی گھونٹ میں ہم یہ سیال اندر اتاریں گے اور ہوش آنے تلک گیت گائیں گے
بچپن کے قصے سناتا ہوا گیت جو آج بھی ہم کو ازبر ہے
‏بیٹری وے بیڑی توِ ٹھلدی تاں پئی ایں پتے پار کیا ہے پتے پار کیا ہے
بیٹری وے بیڑی توں کھلدی تاں پئی ایں پتے پار کیا ہے پتے پار کیا ہے
ہم ملیں گے کہیں
باغ میں گاؤں میں دھوپ میں چھاؤں میں
ریت میں دشت میں شہر میں
مسجدوں میں کلیسوں میں
مندر میں محراب میں چرچ میں
موسلادھار بارش میں بازار میں
خواب میں آگ میں
گہرے پانی میں گلیوں میں جنگل میں اور آسمانوں میں
کون و مکاں سے پرے
غیر آباد سیارہِ آرزو میں
صدیوں سے خالی پڑی بینچ پر
جہاں موت بھی ہم سے دست و گریبان ہوگی
تو بس ایک دو دن کی مہمان ہو گی
تہذیب حافی