حل مسائل ہیں خود بتانے لگے

خواب خود ہیں ہمیں جگانے لگے
زندگی جب نہ بن سکی ان سے
لوگ یہ سولیاں بنانے لگے
غور لہجوں پہ کر لیا کیجے
لفظ معنی نہیں بتانے لگے
جانے کیا کیا فساد ہو جائے
آئینہ سوچ گر دکھانے لگے
کیا اذیت ہے پھول کاغذ کے
اپنی خوشبو سے دل لبھانے لگے
اس کو دیکھا ہے بعد مدت کے
بعد مدت کے ہم پرانے لگے
پوچھنے آئے ہیں وہ اس دل کا
جس کو مدت ہوئی ٹھکانے لگے
ساتھ گذری کا بوجھ کیا کم تھا
تم ہمیں بعد کی سنانے لگے
جہاں کچے گھڑے کا ذکر ہؤا
ہم وہیں کشتیاں بنانے لگے
۔اتباف ابرک
Hal masail hain khud bitanay lagey


hal masail hain khud bitanay lagey
khawab khud hain hamein jaganay lagey
zindagi jab nah ban saki un se
log yeh solyan bananay lagey
ghhor lahjoon pay kar liya kije
lafz maienay nahi bitanay lagey
jane kya kya fasaad ho jaye
aaina soch gir dikhaane lagey
kya aziat hai phool kaghaz ke
apni khushbu se dil lubhaney lagey
is ko dekha hai baad muddat ke
baad muddat ke hum puranay lagey
poochnay aaye hain woh is dil ka
jis ko muddat hui thikaane lagey
sath gzri ka boojh kya kam tha
tum hamein baad ki sunanay lagey
jahan kachay gharrey ka zikar hoa
hum wahein kashtiyan bananay lagey
. Atibaf abrak