کبھی تُم نے کہا تھا، واپس لوٹ جاؤ
کہ محبت حق ہے، فقط کُچھ خوبرؤں کا
حُسن کے شہزادوں کا، بُہت دلکش سے جسموں کا
فلک کے پری زادوں کا ، مگر اس سوغات سے عاری
میں اِک عام سا قاری ، سو واپس لوٹ آیا
مگر یہ کہہ نہ پایا ، بُہت برباد ہوتے ہیں
فقط چہرے کہاں؟ کُچھ دل بھی پری زاد ہوتے ہیں
یہ دل جب ٹوٹ جاۓ تو ، فلک بھی کانپ اُٹھتے ہیں
محبت روٹھ جاۓ تو ، وبائیں پھیل جاتیں ہیں
سو دیکھ لو جاناں ، تُمہارے شہر میں آج جنگلوں کا سکوت ہے
تُمہیں ناز تھا جس پر، وہ محبت بھی مشروط ہے
تُمہارا حُسن بس اِک سیراب ہے،کسی موت کا سا عذاب ہے
اور کیا دلکش کیا بد صورت ، ہر چہرے پر نقاب ہےہر شخص 
باحجاب ہے

kabhi tum ne kaha tha,wapas lout jao,Sad Poetry,Ghazal,



kabhi tum ne kaha tha, wapas lout jao
ke mohabbat haq hai, faqat kُchh خوبرؤں ka
husn ke shehzaada ka, Bohat dilkash se jismon ka
fallak ke pari zadon ka, magar is soghaat se aari
mein ik aam sa qaari, so wapas lout aaya
magar yeh keh nah paaya, Bohat barbaad hotay hain
faqat chehray kahan? kُchh dil bhi pari zaad hotay hain
yeh dil jab toot جاۓ to, fallak bhi kanp uthte hain
mohabbat roth جاۓ to, vbayin phail jatein hain
so dekh lo janan, tumahray shehar mein aaj junglon ka sukut hai
tumhe naz tha jis par, woh mohabbat bhi mashroot hai
tumhara husn bas ik sairaab hai, kisi mout ka sa azaab hai
aur kya dilkash kya bad soorat, har chehray par naqaab hai har shakhs باحجاب hai