New Fatima Blog

This blog is about khwab ki tabeer, Turkish dramas Dubbed in Urdu, Poetry, Naat and cooking videos.

Wednesday, November 4, 2020

Mujhay muhabbat ko is baat sy kia hai kay tum kia thi (Ali Zaryoun)

Mujhay muhabbat ko is baat sy kia hai kay tum kia thi


 مجھے

یعنی محبت کو بھلا اس بات سے کیا ھے
کہ تم کیا تھیں
کہاں کس سے ملی تھیں
اور کہاں شامیں گزاری تھیں
تمھاری سرمگیں آنکھوں نے کس کے خواب دیکھے تھے
نہیں !
مجھ کو
محبت کو کسی ماضی کے لمحے سے کوئی مطلب نہیں رکھنا
محبّت " ہے" کا صیغہ ہے !
یہ تھا اور تھی نہیں ہوتی
یہ ہوتی ہے
سدا ہونے کو ہوتی ہے
یہ وہ مٹؔی ہے جو پانی بگھوتی ہے
سو میں
یعنی محبّت، تم سے کیوں پوچھے
کہ تم کس غم سے گھائل تھیں
محبّت پوچھتی کب ہے !!
کہاں سے آ رہے ہو ؟ کون ہو ؟ اور کس سے ملنا ہے ؟؟
سوالوں میں نہیں پڑتی
یہ استقبال کرتی ہے
تھکے ہارے ہووں کو اپنا جیون دان کرتی ہے
گلے ملتی ہے اور آنکھوں پہ اپنا اسم پڑھتی ہے
تو پھر جیسا بھی ماضی ہو
کوئی ماضی نہیں رہتا
سو میں بھی لمحہ ء موجود میں تم کو سنبھالوں گا
تمھاری مسکراہٹ سے ذرا پیچھے
جو اندیکھی خراشیں ہیں
اگر میں بھر سکوں ان کو
تمھاری گفتگو میں سسکیوں کے ان کہے وقفے
ہنسی میں گر بدل پاوں
تو پھر مانوں
کہ ہاں مجھ کو محبّت ہے
مجھے
یعنی محبّت کو کسی ماضی سے کیا لینا
مجھے یہ " حال" کافی ہے ...!
علی زریون

No comments:

Post a Comment