New Fatima Blog

This blog is about khwab ki tabeer, Turkish dramas Dubbed in Urdu, Poetry, Naat and cooking videos.

Tuesday, December 8, 2020

Imkan yehi hai kay ye imkan rahay ga

 امکان یہی ہے کہ وہ امکان رہے گا

یعنی یہ پریشان ، پریشان رہے گا
جس موڑ پہ ملنا ہے وہیں تک ہے یہ مشکل
آگے کا سفر ساتھ میں آسان رہے گا
دنیا سے نکلنا ہے تو ہے عشق ہی رستہ
پھر اپنی طرف تیرا کہاں دھیان رہے گا
ہر بار یہی سمجھے گا سمجھا تو کہانی
ہر بار مرے یار تُو حیران رہے گا
ہم نے تو محبت سے ہے بس اتنا کمایا
اب اور کوئی دل میں نہ ارمان رہے گا
کہنے کو کواڑوں پہ بہاروں کی ہے دستک
اندر کا بیابان ، بیابان رہے گا
کانٹوں سے سجا لو کہ یہ پھولوں سے سجا لو
گلدان تو گلدان ہے گلدان رہے گا
تم چاہے کہانی سے مرا نام مٹا دو
مٹ کر بھی مرا نام ہی عنوان رہے گا
رخصت کی گھڑی ہم کو یہ معلوم نہیں تھا
تا عمر کوئی دل میں ہی مہمان رہے گا
اس شخص سے اب میرا تعلق ہے بس اتنا
جب تک ہے مری سانس مری جان رہے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتباف ابرک

No comments:

Post a Comment