تیرا چپ رہنا میرے ذہن میں کیا بیٹھ گیا

اتنی آوازیں تجھے دیں کہ گلا بیٹھ گیا

یوں نہیں ھے کہ فقط میں ہی اسے چاہتا ہوں
جو بھی اس پیڑ کی چھاؤں میں گیا بیٹھ گیا

اپنا لڑنا بھی محبت ہے تمہیں علم نہیں
چیختی تم رہی اور میرا گلا بیٹھ گیا

بات دریاؤں کی سورج کی نہ تیری ہے یہاں
دو قدم جو بھی مرے ساتھ چلا بیٹھ گیا

اتنا میٹھا تھا وہ غصے بھرا لہجہ مت پوچھ
اس نے جس کو بھی جانے کا کہا بیٹھ گیا

بزم جاناں میں نشستیں نہیں دیکھی جاتی
جو بھی اک بار جہاں بیٹھ گیا بیٹھ گیا

اس کی مرضی وہ جسے پاس بٹھائے اپنے
اس پہ کیا لڑنا فلاں میری جگہ بیٹھ گیا

تہذیب حافی
Tera chup rehna mere zehen mein kya baith gaya



tera chup rehna mere zehen mein kya baith gaya

itni aawazian tujhe den ke gala baith gaya

yun nahi he ke faqat mein hi usay chahta hon
jo bhi is pairr ki chaon mein gaya baith gaya

apna larna bhi mohabbat hai tumhe ilm nahi
chikhati tum rahi aur mera gala baith gaya

baat daryaaon ki Sooraj ki nah teri hai yahan
do qadam jo bhi marey sath chala baith gaya

itna meetha tha woh ghusse bhara lehja mat pooch
is ne jis ko bhi jane ka kaha baith gaya

bazm janan mein nashistain nahi dekhi jati
jo bhi ik baar jahan baith gaya baith gaya

is ki marzi woh jisay paas bethaye –apne
is pay kya larna falan meri jagah baith gaya

tahazeeb Hafi