تم نہ مانو مگر حقیقت ہے
عشق انسان کی ضرورت ہے
جی رہا ہوں اس اعتماد کے ساتھ
زندگی کو مری ضرورت ہے
حسن ہی حسن جلوے ہی جلوے
صرف احساس کی ضرورت ہے
اس کے وعدے پہ ناز تھے کیا کیا
اب در و بام سے ندامت ہے
اس کی محفل میں بیٹھ کر دیکھو
زندگی کتنی خوبصورت ہے
راستہ کٹ ہی جائے گا قابلؔ
شوق منزل اگر سلامت ہے
قابل اجمیری

POETRY,Sad Poetry,Qabil Ajmeri,tum nah manu magar haqeeqat hai,ishhq insaan ki zaroorat hai,


tum nah manu magar haqeeqat hai
ishhq insaan ki zaroorat hai
jee raha hon is aetmaad ke sath
zindagi ko meri zaroorat hai
husn hi husn jalwey hi jalwey
sirf ehsas ki zaroorat hai
is ke waday pay naz thay kya kya
ab dar o baam se nedamat hai
is ki mehfil mein baith kar dekho
zindagi kitni khobsorat hai
rasta kat hi jaye ga قابلؔ
shoq manzil agar salamat hai
qabil ajmiri